51

فیس بک کو روس سے ملنے والے اشتہارات کی تفصیلات شائع

دنیا کی سب سے بڑی سوشل ویب سائٹ فیس بک نے گزشتہ برس 2016 میں امریکی انتخابات کے دوران روس سے ملنے والے اشتہارات کی تفصیلات شائع کردیں۔

خیال رہے کہ 2016 کے امریکی انتخابات میں ڈونلڈ ٹرمپ حیران کن طور پر امریکی صدر منتخب ہوئے تھے، جس کے بعد فیس بک پر الزام لگا کہ اس نے جھوٹے اشتہارات پھیلا کر ڈونلڈ ٹرمپ کی مدد کی۔

شروعاتی مہینوں میں فیس بک ایسے الزامات کو مسترد کرتا رہا، لیکن رواں برس ستمبر میں فیس بک نے پہلی بار اعتراف کیا کہ اسے امریکی انتخابات کے دوران روس سے ایک لاکھ امریکی ڈالرز کے اشتہارات ملے تھے۔

کمپنی کی جانب سے اس بات کا بھی اعتراف کیا گیا تھا کہ یہ اشتہارات جون 2015 سے مئی 2017 کی مدت کے لیے حاصل کیے گئے، جو زیادہ تر غیر مستند اور نئے پیجز اور اکاؤنٹ سے چلائے گئے۔

فیس بک کی بلاگ پوسٹ میں بتایا گیا تھا کہ ملنے والے اشتہارات کے ذریعے امریکی انتخابات میں کسی خاص امیدوار کی حمایت یا خصوصی طور پر انتخابی مہم کے لیے استعمال نہیں کیا گیا۔

تاہم ان اشتہارات کے ذریعے بلواسطہ طور پر حساس موضوعات کو چھیڑا گیا، جن میں ٹرانس جینڈر افراد کا معاملہ، امیگریشن، مسلمانوں اور گن کنٹرول جیسے مسائل سرفہرست ہیں۔

اب فیس بک نے روس کی جانب سے ملنے والے ان اشتہارات کی تفصیل امریکی سینیٹ کی خصوصی ہاؤس انٹیلی جنس کمیٹی کو فراہم کی ہیں۔

فیس بک نے کمیٹی کو اشتہارات کی تفصیلات فراہم کرنے کے بعد انہیں انفوگرام کی صورت میں شائع بھی کیا۔

تفصیلات میں فیس بک اور انسٹگرام کو ملنے والے اشتہارات کی تفصیل اور ان کی مد میں ملنے والی رقم کی تفصیل پڑھی جا سکتی ہے۔

تفصیلات سے پتہ چلتا ہے کہ فیس بک اور انسٹاگرام کو امریکی انتخابات کے دوران مسلمانوں سے متعلق حساس معاملات سمیت ٹرانس جینڈر، گن کنٹرول اور ڈونلڈ ٹرمپ کے حوالے سے مختلف اشتہار شائع کرنے کی مد میں ہزاروں ڈالر دیے گئے۔

واضح رہے کہ امریکی انتخابات کے دوران فیس بک کی جانب سے روس سے اشتہارات لینے کے معاملے پر امریکی خفیہ ادارے اور سینیٹ کی کمیٹیاں تحقیقات کر رہی ہیں۔

اگر فیس بک پر الزامات ثابت ہوئے تو اسے بھاری جرمانے کا سامنا کرنا پڑ سکتا ہے۔

 

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں