72

اٹھارویں ترمیم کی حفاظت کریں گے‘ سردار حسین بابک

عوامی نیشنل پارٹی کے صوبائی جنرل سیکرٹری سردار حسین بابک نے کہا ہے کہ موجودہ حکومت مکمل طور پر ناکام ہو چکی ہے اور تبدیلی کے نام پر عوام کو دھوکہ دینے والوں کا یوم حساب قریب آ چکا ہے۔

ان خیالات کا اظہار انہوں نے طوطالئی بونیر میں باچا خان اور ولی خان کی برسی کے موقع پر منعقدہ تقریب سے خطاب کرتے ہوئے کیا، اس موقع پر اکابرین کیلئے قرآن خوانی کا اہتمام کیا گیا اور ان کے ایصال ثواب کیلئے فاتحہ خوانی کی گئی ، تقریب سے بونیر کے ضلعی صدر محمد کریم بابک،رؤف خان ، سید رحیم خان ، شمس بونیری اور سردار جہان خان نے بھی خطاب کیا ، سردار حسین بابک نے اپنے خطاب میں باچا خان اور ولی خان کی تاریخی جدوجہد اور تحریک ؤزادی کیلئے ان کی قربانیوں پر تفصیلی روشنی ڈالی اور کہا کہ باچا خان نے تمام مسائل کے حل کیلئے عدم تشدد کا ہتھیار دیا اور اب وقت آ گیا ہے کہ لوگوں کو باچا خان بابا کے فلسفہ سے مکمل آگاہی ہونی چاہئے کیونکہ امن کے قیام کیلئے اس کے علاوہ اب کوئی دوسرا راستہ نہیں۔

انہوں نے کہا کہ باچا خان نے قوم کو غلامی سے آزاد کرانے کیلئے جدوجہد کی اور آزادی کیلئے ضرورتِ علم کو محسوس کرتے ہوئے بے شمار سکول قائم کئے ،اور قلم کے فلسفے کے ذریعے انگریز کو نکال کر قوم کو آزادی دلائی، انہوں نے کہا کہ آج تاریخ نے ثابت کر دیا ہے کہ فخر افغان باچا خان اور ولی خان بابا کی فکر ہی دراصل عدم تشدد، ملک دوستی اور عوام دوستی پر مبنی تھی اور ان کی سوچ کی جتنی ضرورت آج ہے پہلے کبھی نہیں تھی، سردار بابک نے کہا کہ باچا خان بابا کی عدم تشدد اور امن کے حوالے سے سوچ و فکر لوگوں میں شعور پیدار کر رہی ہے اور رہبر تحریک خان عبدالولی خان نے اپنے والد کے مشن کا تسلسل جاری رکھتے ہوئے سماجی انصاف کیلئے کوششیں جاری رکھیں، انہوں نے کہا کہ جمہوریت کی بقا کیلئے خان عبدالولی خان کا کردار تاریخ کا انمٹ باب ہے ۔ ولی خان جمہوریت کے حقیقی علمبردار تھے اور اگر جمہوریت سے خان عبدالولی خان کا نام نکال دیا جائے تو ملک میں کچھ بھی باقی نہیں رہتا۔

ملک کی مجموعی سیاسی صورتحال کے حوالے سے انہوں نے کہا کہ عمران خان کو اقتدار میں لانے کا مقصد اٹھارویں آئینی ترمیم کو ختم کرنا تھا ،ہم انہیں خبردار کرنا چاہتے ہیں کہ صوبائی خودمختاری سمیت اٹھارویں آئینی ترمیم سے حاصل تمام حقوق پر کوئی سمجھوتہ نہیں کیا جائیگا اور سازشیں کرنے والے ناکامی سے دوچار ہونگے انہوں نے کہا کہ پاکستان کے موجودہ قرضے کا حجم 2200ارب سے تجاوز کرچکا ہے اور روزاس میں پندرہ ارب کا اضافہ ہورہا ہے،حکومت نے اپنی پالیسیوں کی وجہ سے پاکستان کو بند گلی میں لاکر کھڑا کیا ہے، کوئی تعلیمی ،معاشی اور خارجہ پالیسی نہیں اور پھر بھی کپتان بڑی کامیابی کی دعوے کررہا ہے ،نہوں نے کہا کہ لاپتہ افراد کا معاملہ سنگین صورتحال اختیار کر چکا ہے اور ان کے لواحقین اپنے پیاروں کی زندگی یا موت سے بے خبر ہیں ۔

سردار حسین بابک نے کہا کہ لاپتہ افراد کو اٹھانے والے چہرے بے نقاب کر کے بے گناہ مغویوں کو رہا کیا جائے ،خیسور واقعہ کا ذکر کرتے ہوئے انہوں نے کہا کہ ایک شخص کو رہا کر دیا گیا ہے جبکہ دوسرا شخص تاحال لاپتہ ہے ، انہوں نے کہا کہ اس قسم کے واقعات میں ملوث عناصر کو سخت سزا دی جائے تاکہ مستقبل میں قبائلی عوام کی زندگیوں کا تحفظ ممکن ہو سکے۔

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں