26

نشترآباد میں بریسٹ کینسر انسٹیٹیوٹ کی منظوری

پشاور۔وزیراعلیٰ خیبرپختونخواکے خصوصی معاؤن برائے سائنس و انفارمیشن ٹیکنالوجی کامران بنگش کی کوششوں کی بدولت صوبائی حکومت نے 60 کروڑ روپے کی خطیرلاگت سے نشترآباد پشاور میں ہیپاٹالوجی اور بریسٹ کینسر انسٹیوٹ کی منظوری دے دی۔

شہر پشاور کے لئے اسے ایک اہم سنگ میل قرار دیتے ہوئے کامران بنگش نے کہا ہے کہ یہ منصوبہ عوام کا دیرینہ مطالبہ تھا، جسے آج پورا کر دیا گیا، اور اسی طرح عوام سے کئے گئے تمام وعدے پورے کئے جائیں گے۔ تاکہ تمام محرومیوں کا بروقت ازالہ ہو۔ وزیراعظم عمران خان اور وزیراعلیٰ محمود خان کے وژن کے مطابق صوبے میں صحت سے متعلق تمام سہولیات دینے کے لئے منصوبہ بندی کی جا چکی ہے۔ جبکہ نشتر آباد میں 60 کروڑ روپے کی لاگت سے منظور ہونے والا ہیپاٹالوجی اور بریسٹ کینسر انسٹیٹوٹ اس کی سب سے بڑی مثال ہے، جس کے گراؤنڈ ورک مکمل کر لیا گیا ہے۔

معاؤن خصوصی کامران بنگش نے کہا کہ ہماری کوشش ہے کہ صحت کے معاملے میں کسی قسم کی غفلت برداشت نہیں کی جائے، اور جلد از جلد بنیادی صحت سہولیات سب کو دستیاب ہو۔ نشترآباد میں منظور ہونے والے اس میگا پراجیکٹ سے نہ صرف اہل پشاور کو فائدہ پہنچے گا، بلکہ یہ دیگر علاقوں کے مریضوں کے بھی دستیاب ہوگی۔ وزیر اعلیٰ خیبرپختونخوا محمود خان،صوبائی وزیرخزانہ تیمور سلیم جھگڑاور وزیر صحت ہشام انعام اللہ کا خصوصی شکریہ ادا کرتے ہوئے کامران بنگش کا کہنا تھا۔

وزیراعلیٰ سمیت محکمہ صحت اور فنانس کی کوششوں کی بدولت اس منصوبے کو مخلصانہ انداز میں آگے لے جایا گیا، اور بغیر وقت ضائع کئے منصوبے کے لئے رقم منظور کر لی گئی۔ پشاور سٹی ایریا میں ہیپاٹائٹس اور بریسٹ کینسر کے مریضوں کے لئے اس انسٹیٹوٹ سے علاج و معالجے بارے آسانی مہیا ہوگی۔ انہوں نے کہا ہیلتھ ڈیپارٹمنٹ کے ساتھ خصوصی گفت و شنید کے بعد اس منصوبے کو عملی جامہ پہنایا گیا ہے جو حلقہ PK-77 کے عوام لئے بھی بڑی خوشخبری ہے۔

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں